اسلامی جمعیت طلبہ نے سندھ بھر میں”پہچان پاکستان”مہم کا آغازکردیا ہے سندھ میں نظام تعلیم تباہی کے دہانے پرہے۔فیسوں میں اضافے سے تعلیم غریب کی پہنچ سے دور ہوتی رہی ہے-ناظم صوبہ سندھ اسد علی قریشی ۔

اسلامی جمعیت طلبہ نے سندھ بھر میں”پہچان پاکستان”مہم کا آغازکردیا ہے
باب السلام سندھ کے طلبہ کمشیریوں کی جدوجہدآزادی کے شانہ بشانہ کھڑے ہیں۔کشمیرپر سودے بازی قبول نہیں،بھرپوراحتجاجی تحریک چلائیں گے۔
سندھ میں نظام تعلیم تباہی کے دہانے پرہے۔فیسوں میں اضافے سے تعلیم غریب کی پہنچ سے دور ہوتی رہی ہے۔تعلیم کی بہتری کے پرزور آواز اٹھائیں گے۔مہم کے دوران 25 لاکھ طلبہ تک رسائی حاصل کریں گے۔اسدعلی قریشی ۔ناظم اسلامی جمعیت طلبہ سندھ
حیدرآباد ( ) اسلامی جمعیت طلبہ سندھ کے ناظم اسدعلی قریشی نے کہا ہے کہ باب السلام سندھ کے طلبہ کشمیریوں کی آزادی کے لیے شانہ بشانہ کھڑے ہیں۔ملک بھرمیں کشمیر پر سودے بازی کی چہ مگوئیاں کی جارہی ہیں۔کشمیرتکمیل پاکستان کی ضمانت ہے۔اس پرکسی بھی قسم کی سودے بازی یا مغربی ڈکٹیشن قبول نہیں۔ان خیالات کا اظہار انہوں نے پریس کلب حیدرآباد میں پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے کیا۔انہوں نے مزید کہا کہ اسلامی جمعیت طلبہ سندھ صوبہ بھر میں خصوصی طورپر کشمیربنے گا پاکستان کے عنوان سے عشرہ آزادی کشمیر منائے گی۔جس کے دوران باب السلام سندھ کے تمام بڑے شہروں میں کشمیرمارچ تعلیمی اداروں میں ہاتھوں کی زنجیر،عوامی مقامات پر تصویری نمائش سمیت دیگر سرگرمیوں کا انعقاد کیا جائے گا۔اسدعلی قریشی نے صوبے میں تعلیم کی ابتر صورت حال پر بھی گہری تشویش کا اظہار کیا۔ان کا ان ضمن میں کہناتھا کہ صوبے میں تعلیم کا نظام تباہی کا شکارہے۔سندھ میں تعلیمی مسائل جوں کہ توں موجود ہیں۔جامعات وکالجز میں فیسوں کے اضافے نے غریب طلبہ کو مشکلات سے دوچارکردیا ہے۔صوبے بھر کی جامعات میں سہولتوں کا فقدان ہے۔گھوسٹ تعلیم ادارے اورکالجز میں اسٹاف اور سہولتوں کی کمی سے طلبہ و طالبات متاثر ہورہے ہیں۔HECکی جانب سے تعلیمی اداروں کے فنڈز میں بھی کٹوتی کی گئی ہے۔جس کا براہ راست اثر متوسط طبقے کے طلبہ پر پڑا ہے۔ناظم ناظم اسلامی جمعیت طلبہ سندھ نے سندھ بھر میں “پہچان پاکستان” مہم کا آغاز کرتے ہوئے کہا کہ جمعیت نے اپنی کامیاب مہمات کے ذریعے بڑی تعداد میں نئے طلبہ کو اپنے قافلے میں شامل کیا۔رواں سال بھی پہچان پاکستان مہم کے ذریعے 25 لاکھ طلبہ تک رسائی حاصل کی جائے گی۔ان طلبہ کو جمعیت کا ھصہ بنایا جائے گا۔اور انکو پاکستان کی تعمیروترقی کے لیے اپنا کردرا ادا کرنے کے لیے آمادہ کیا جائے گا۔اسدعلی قریشی نے مہم کی دیگر تفصیلات بتاتے ہوئے کہا کہ مہم کا دورانیہ 16 ستمبر تا 30 دسمبر تک ہوگا۔مہم کا بنیادی مقصد طلبہ کو قیام پاکستان کے نظریاتی اساس سے آگاہ کرنا اور اس کی اصل اساس سے جوڑنا،تعمیربذریعہ تعلیم کا تصور دیتے ہوئے تعلیمی مسائل کو اجاگر کرنا طلبہ کو معاشرے کی فلاح کے لیے عملی اقدامات پرآمادہ کرنا ہے۔دریں اثنا اسدعلی قریشی کا کہنا تھا کہ مکمل مہم دس عشروں پرمشتمل ہوگی۔جس میؐ پہلا عشرہ یکجہتی کشمیرکے بعد دوسرا عشرہ فکر مودودی رحمتہ اللہ کے سلوگن کے ساتھ منایا جائا گا۔مہم کا تیسرا عشرہ والدین اور اساتذہ سے منسوب کی اگیا ہے۔چوتھا عشرہ ریڈر آر لیڈر کے عنوان کے ساتھ منایا جائے گا۔پانچواں عشرہ شجرکاری،چھٹا عشرہ پیغام اقبال کے سلوگن کے ساتھ منایا جائے گا۔اسی طرح مہم کے ساتویں عشرے میں اسٹوڈنس کنوینشن،میگا ایجوکشنل ایکسپوز،کتب میلے اورتعلیمی سیمنارمنعقد کیے جائیں گے۔مہم کا آٹھواں عشرہ نظریہ پاکستان کو اجاگرکرنے کے لیے منایاجائے گا۔جبکہ نواں عشرہ ہفتہ شاہ لطیف اورہفتہ کھیل کے طور پر منایا جائے گا۔مہم کا دسواں اور آخری ہفتہ اسلامی جمعیت طلبہ کے تاسیس کے حوالے سے منایاجائے گا۔اسلامی جمعیت طلبہ نے اپنی گزشتہ مہمات میں طلبہ مسائل کے حوالے سے بھرپورآواز بلند کی۔جبکہ اس سال بھی پہچان پاکستان مہم کے دوران مزید موثرانداز میں طلبہ کے مسائل کو اجاگر کرے گی۔اس موقعہ ر انکے ہمراہ سیکریٹری جمعیت سندھ عمیرشمس،ناظم اسلامی جمعیت طلبہ حیدرآباد سعداحسن قاضی،ناظم اسلامی جمعیت طلبہ حیدرآباد ڈویژن فیضان بھٹی،صدربزم ساتھی مرزانعمان بیگ اورسیکریٹری اطلاعات ایازعلی عمرانی بھی موجود تھے۔

By | 2019-09-16T19:10:39+00:00 September 16th, 2019|Latest News|0 Comments

Leave A Comment